Bohlool’s Conversation with Abu Hanifa


One day Abu Hanifa was teaching at the college. Bohlool was sitting in a corner, listening to Abu Hanifa’s lesson. In the middle of his lesson, Abu Hanifa said that, “Imam Jafar Sadiq says three things that I don’t agree with.

These are: Firstly, he says Shaitan will be punished in the Hell-fire. Since Shaitan is made of fire, then how is it possible that fire can hurt him? One kind of thing can’t get hurt from the same kind of thing.

Secondly, he says that we can’t see Allah; but something that is present must also be able to be seen. Therefore, Allah can be seen by our eyes.

Thirdly, he says that whoever does something is himself responsible for it; and will be questioned about it because he did it himself; but evidence is against this. Meaning, whatever a person does is done by Allah and the person has no control over what he does.”

As soon as Abu Hanifa said this, Bohlool picked up a clod of earth and threw it at him. It hit his forehead and gave him severe pain. Then Bohlool ran away. Abu Hanifa’s students ran after Bohlool and caught him. Since Bohlool was related to the Khalifa, they took him to the Khalifa and narrated the whole incident.

Bohlool said, “Call Abu Hanifa so that I can give him my answer.” Abu Hanifa was called and Bohlool said to him, “What wrong have I done to you?”

“You hit my forehead with a clod of earth. My forehead and head are in severe pain.”

“Can you show me your pain?”

“Can pain be seen?”

Bohlool replied, “You yourself say that every present thing can be seen and you criticize Imam Jafar Sadiq by saying how is it possible that Allah is present, but invisible.

Secondly, you wrongly claim that the clod of earth pains your head; because the clod of earth is made of mud and you were also created from mud. Then how can one kind of thing hurt the same type of substance?

Thirdly, you yourself said that all acts are done by Allah. Then how can you say that I am guilty, present me to the Khalifa, complain about me, and demand punishment for me!”

Abu Hanifa listened to Bohlool’s intelligent answers and shamefully left Haroun’s court.

10 Responses to “Bohlool’s Conversation with Abu Hanifa”

  1. imz Says:

    this episode is pure fabrication by Allah!! to de-mean imam abu-hanifa!

  2. moralsandethics Says:

    First find the truth from History & then say that what is fabrication & what is Fact. Read History books than you will come to know what was the level of Bahlul and Levle of Abu Hanifa

    • shaikh rashed Says:

      may allah give u hidaya this story is pure fabrication…….it is not from any authentic source

  3. Muzz Says:

    This is totally fabricated this incedent was between aristortal the philosopher and a pious saint what history book did you find that this story is related to imaam abu hanifa

  4. msmos Says:

    When you cote something you must also cote the reference. with out any reference you can not make up a story and present it. May Allah guide us from shaitan

  5. mohammad Says:

    this is a lie a shia propaganda looolz
    these shias dont let any one they attack every one
    subhanAllah

  6. shaikh rashed Says:

    what kind of history book u mean to say?mr moral …history of shite?my brother may allah guide u ,,,,as allah said in sura mulk c67 v29soon u ll know who is in mainfest error

  7. Ayaz Says:

    Completely ignorant person or having evil mentality who said the opposite in this story. We can expect things like from jews and qadianis. However these strories can never change the status of Imam-e-‘Azam (Rahmatullah-e-‘Alaih) amongst true Muslims.

  8. Syed Tahir Says:

    To all Drs,
    Your comments are to good. But the batil are always jelise from HAQ.

  9. Hasan Says:

    ایک دن ابو حنیفہ [جو امام جعفر صادق کے ایک شاگرد تھے] مسجد کو فہ میں درس دے رہے تھے، اس وقت امام جعفر صادق علیہ السلام کے ایک اور شاگرد ”فضال بن حسن “ اپنے ایک د وست کے ساتھ ٹہلتے ہوئے وہاں پہنچ گئے۔ انھوں نے دیکھا کہ کچھ لوگ ابو حنیفہ کے ارد گرد بیٹھے ہوئے ہیں اور وہ انھیں درس دے رہے ہیں،

    فضال اپنے اس دوست کے ساتھ اس جگہ پہنچے جہاں ابو حنیفہ بیٹھے درس دے رہے تھے، یہ بھی ان کے پاس بیٹھ گئے۔

    تھوڑی دیرکے بعد فضال نے چند سوالات کئے۔

    فضال: ”اے رہبر !میرا ایک بھائی ہے جو مجھ سے بڑا ہے مگر وہ شیعہ ہے۔ حضرت ابوبکر کی فضیلت ثابت کرنے کے لئے میں جو بھی دلیل لے آتا ہوں وہ رد کردیتا ہے لہٰذا میں چاہتا ہوں کہ آپ مجھے چند ایسے دلائل بتادیں جن کے ذریعہ میں اس پر حضرت ابوبکر ،عمراور عثمان کی فضیلت ثابت کر کے اسے اس بات کا قائل کر دوں کہ یہ تینوں حضرت علی سے افضل وبر تر تھے ۔“

    ابو حنیفہ: ”تم اپنے بھائی سے کہنا کہ وہ آخر کیوں حضرت علی کو حضرت ابو بکر ،عمر اور عثمان پر فضیلت دیتا ہے جب کہ یہ تینوں حضرات ہر جگہ رسول خدا صلی الله علیه و آله وسلم کی خدمت میں رہتے تھے اور آنحضرت ،حضرت علی کو جنگ میں بھیج دیتے تھے یہ خود اس بات کی دلیل ہے کہ آپ ان تینوں کو زیادہ چاہتے تھے اسی لئے ان کی جانوں کی حفاظت کے لئے انھیں جنگ میں نہ بھیج کر حضرت علی کو بھیج دیا کرتے تھے ۔“
    فضال: ”اتفاق سے یہی بات میں نے اپنے بھائی سے کہی تھی تو اس نے جواب دیا کہ قرآن کے لحاظ سے حضرت علی چونکہ جہاد میں شرکت کرتے تھے اس لئے وہ ان تینوں سے افضل ہوئے کیونکہ قرآن مجید میں خدا کاخود فرمان ہے:

    ” وَفَضَّلَ اللهُ الْمُجَاہِدِینَ عَلَی الْقَاعِدِینَ اٴَجْرًا عَظِیمًا “ سورہٴ نساء، آیت ۹۷۔

    ”خدا وند عالم نے مجاہدوں کو بیٹھنے والوں پر اجر عظیم کے ذریعہ فضیلت بخشی ہے“۔

    ابو حنیفہ: ”اچھا ٹھیک ہے تم اپنے بھائی سے یہ کہو کہ وہ کیسے حضرت علی کو حضرت ابو بکر و عمر سے افضل وبرتر سمجھتا ہے جب کہ یہ دونوں آنحضرت صلی الله علیه و آله وسلم کے پہلو میں دفن ہیں اورحضرت علی کا مرقد رسول سے بہت دور ہے ۔رسول خدا صلی الله علیه و آله وسلم کے پہلو میں دفن ہونا ایک بہت بڑا افتخار ہے یہی بات ان کے افضل اور بر تر ہونے کے لئے کافی ہے ۔“

    فضال: ”اتفاق سے میں نے بھی اپنے بھائی سے یہی دلیل بیان کی تھی مگر اس نے اس کے جواب میں کہا کہ خدا وند عالم قرآن میں ارشاد فرماتا ہے:

    ”لاَتَدْخُلُوا بُیُوتَ النَّبِیِّ إِلاَّ اٴَنْ یُؤْذَنَ لَکُمْ“ سورہٴ احزاب، آیت ۵۳

    ”رسول کے گھر میں بغیر ان کی اجازت کے داخل نہ ہو“۔

    یہ بات واضح ہے کہ رسو ل خدا کا گھر خود ان کی ملکیت تھا اس طرح وہ قبر بھی خود رسول خدا کی ملکیت تھی اور رسول خدا صلی الله علیه و آله وسلم نے انھیںا س طرح کی کوئی اجازت نہیں دی تھی اور نہ ان کے ورثاء نے اس طرح کی کوئی اجازت دی۔“

    ابو حنیفہ: ” اپنے بھائی سے کہو کہ عائشہ اور حفصہ دونوں کا مہر رسول پر باقی تھا، ان دونوں نے اس کی جگہ رسو ل خدا کے گھر کا وہ حصہ اپنے باپ کو بخش دیا۔

    فضال: ”اتفاق سے یہ دلیل بھی میں نے اپنے بھائی سے بیان کی تھی تو اس نے جواب میں کہا کہ خداوند عالم قرآن میں ارشاد فرما تا ہے۔

    ” یَااٴَیُّہَا النَّبِیُّ إِنَّا اٴَحْلَلْنَا لَکَ اٴَزْوَاجَکَ اللاَّتِی آتَیْتَ اٴُجُورَہُنّ“ سورہٴ احزاب۔آیت ۴۹۔

    ”اے نبی!ہم نے تمہارے لئے تمہاری ان ازواج کو حلال کیا ہے جن کی اجرتیں (مہر)تم نے ادا کر دی“۔

    اس سے تو یہی ثابت ہوتا ہے کہ رسول خدا صلی الله علیه و آله وسلم نے اپنی زندگی میں ہی ان کا مہر ادا کر دیا تھا“۔

    ابو حنیفہ: ”اپنے بھائی سے کہو کہ عائشہ حفصہ رسول خدا صلی الله علیه و آله وسلم کی بیویاں تھیں انھوں نے وارث کے طور پر ملنے والی جگہ اپنے باپ کو بخش دی لہٰذا وہ وہاں دفن ہوئے“۔

    فضال: ”اتفاق سے میں نے بھی یہ دلیل بیان کی تھی مگر میرے بھائی نے کہا کہ تم اہل سنت تو اس بات کا عقیدہ رکھتے ہو کہ پیغمبر وفات کے بعد کوئی چیز بطور وراثت نہیں چھوڑتا اور اسی بنا پر رسول خدا صلی الله علیه و آله وسلم کی بیٹی جناب فاطمہ الزہرا سلام اللہ علیہا کو تم لوگوں نے فدک سے بھی محروم کردیا اور اس کے علاوہ اگر ہم یہ تسلیم بھی کر لیں کہ خداکے نبی وفات کے وقت وراثت چھوڑتے ہیں تب یہ تو سبھی کو معلوم ہے کہ جب رسول خدا صلی الله علیه و آله وسلم کا انتقال ہوا تو اس وقت آپ کی نو بیویاں تھیں۔ اور وہ بھی وراثت کی حقدار تھیں اب وراثت کے قانون کے لحاظ سے گھرکا آٹھواں حصہ ان تمام بیویوں کا حق بنتا تھا اب اگر اس حصہ کو نو بیویو ں کے درمیان تقسیم کیا جائے تو ہر بیوی کے حصے میں ایک بالشت زمین سے زیادہ کچھ نہیں آئے گا ایک آدمی کی قد وقامت کی بات ہی نہیں“۔

    ابو حنیفہ یہ بات سن کر حیران ہو گئے اور غصہ میں آکر اپنے شاگردوں سے کہنے لگے:

    ”اسے باہر نکالو یہ خود شیعہ ہے اس کا کوئی بھائی نہیں۔

    Now what u say about your imam-e-azam abu hanifa according to Qur’an??


Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: